شوٹ آؤٹ ایٹ بی ایم سی

شوٹ آؤٹ ایٹ بی ایم سی

bmc-blast-670

جون بروز ہفتہ کوئٹہ ایک بار پھر خون میں نہا گیا۔ ہواؤں میں ایک بار پھر بارود اور خون کی بو پھیل گئی اور کچھ ہفتوں سے طاری شہر کی پرسکون خاموشی میں ایک بار پھر دہشت کا زہر بھر دیا گیا۔ٹیلی ویژن اسکرین پر بہادر خان ویمن یونیورسٹی کی جل کر راکھ ہونے والی بس اور ہلاک ہونے والی طالبات کی سفید کفن میں لپٹی لاشوں کو دیکھ کر مجھے یوں لگا جیسے یہ مناظرمیں پہلے بھی کئی بار دیکھ چکا ہوں۔مجھے یاد آیا کہ جون 2012 میں جب   بلوچستان یونیورسٹی آف انفارمیشن ٹیکنالوجی کی بس  پر بم حملہ ہوا تھا تو بھی یہی مناظر تھے۔پھر اسی سال دسمبر میں جب   ایران جانے والے مسافروں کی بس کو بم سے اُڑایا گیا  تو تب بھی یہی ماحول تھا۔ وہی سوختہ اورٹکڑوں میں بٹی لاشیں اورزخمیوں کی وہی چیخ و پکار۔میں انہی سوچوں میں گم تھا جب ٹیلی ویژن پر ایک اور دھماکے کی خبر نشر ہوئی۔ یہ دھماکہ بولان میڈیکل کمپلکس کے ایمرجنسی وارڈ میں ہوا تھا جہاں پہلے دھماکے میں زخمی ہونے والی طالبات کا علاج کیا جارہا تھا۔ اس خود کش دھماکے کے نتیجے میں کوئٹہ کے ڈپٹی کمشنر، ایک ڈاکٹر اور تین نرسوں سمیت کئی لوگوں کی جانیں چلی گئیں۔
     مجھے یاد آیا کہ ایسا ہی ایک واقعہ پہلے بھی رونما ء ہو چکا ہے جب اپریل 2010 میں کوئٹہ کے سول ہسپتال کے ایمرجنسی وارڑ کے باہر ایسا ہی ایک خود کش دھماکہ ہوا تھا  ۔ اس دھماکے  میں رکن قومی اسمبلی سید ناصر شاہ بال بال بچے تھے لیکن ایک نیوز چینل کے کیمرہ مین اور چار پولیس اہلکاروں سمیت ایک درجن سے زائد افراد ان کی طرح خوش قسمت ثابت نہیں ہو سکے اور جان سے ہاتھ دھو بیٹھے۔اپنے شکار کو گھیر کر مطلوبہ جگہ تک لانے کے لئے اس دن بھی ایک ایسا ہی جال بُنا گیا تھا اور کچھ گھنٹے قبل ہی قندہاری بازار میں  ایک بینکار کو ٹارگٹ کرکے قتل کیا گیا تھا۔

میری سوچوں کا سلسلہ تب ایک بار پھر ٹوٹا جب میں نے ٹی وی اسکرین پر لوگوں کو سراسیمگی کی حالت میں ادھر اُدھر بھاگتے دیکھا۔ پتہ چلا کہ ہسپتال کی چھت پر کئی دہشت گرد مورچہ لگائے بیٹھے ہیں جوہسپتال میں موجود ہر شخص پر اندھادھند گولیاں برسارہے اور دستی بم پھینک رہے ہیں۔یہ منظر بھی میرے لئے کوئی نیا نہیں تھا۔ ایسا ہی ایک واقعہ مارچ 2004 میں ہوا تھا جب کوئٹہ کے لیاقت بازار میں   عاشورہ کے جلوس پر اسی انداز میں  حملہ کیا گیا تھا۔تب سڑک کے دونوں اطراف چھتوں پر چھپے دہشت گردوں نے پہلے تو جدید ہتھیاروں اور دستی بموں سے جلوس کے شرکاء پر حملہ کیا پھر جب ان کے پاس اسلحے کا ذخیرہ ختم ہوا تو انہوں نے نیچے کود کر اپنے آپ کو بھی دھماکے سے اُڑا لیا۔اس سانحے میں چالیس سے زیادہ افراد ہلاک اور سو سے زیادہ زخمی ہوئے تھے ۔ اسی طرح کا ایک اور واقعہ ستمبر 2010 میں بھی پیش آیا تھا جب کوئٹہ ہی کے میزان چوک پر   یوم القدس نامی ایک ریلی پر خود کش حملہ ہوا ۔ابھی لوگ اس حملے سے سنبھلنے ہی نہ پائے تھے جب چاروں اطراف کی چھتوں پر چھپے نامعلوم افراد نے ان پر گولیوں کی بوچھاڑ کردی۔ اس واقعے میں بھی ایک نیوز چینل کے کیمرہ مین سمیت اسّی سے زیادہ افراد ہلاک اور تین سو سے زیادہ زخمی ہوئے تھے۔

  میں نے ایک بار پھر ٹی وی پر نظریں جمائیں تو دیکھا کہ اسکرین پر ایک ہسپتال کا منظر ابھر آیا تھا جہاں قطار میں لیٹی اور سفید کفن میں لپٹی کچھ لاشیں نظر آئیں۔لاشوں کے چہرے ڈھکے ہوئے تھے۔ ڈھکے نہ بھی ہوتے تو انہیں کون پہچان سکتا کیوں کہ موت کی بے رحم آگ نے زندگی کے علاوہ ان سے ان کی شناخت بھی چھین لی تھی۔پھر مجھے یاد آیا کہ دہشت گردی کے واقعات میں جل کر کوئلہ بنی لاشوں کی کہانیاں بھی تو نئی نہیں ایسا کتنی بار ہوا ہے جب ان کے پیارے ایک ایک کرکے لاشوں کے چہرے سے کفن اُٹھا کے انہیں پہچاننے کی ناکام کوشش کرتے ہیں لیکن مسخ شدہ چہرہ دیکھ کر دوبارہ ڈھانپ دیتے ہیں۔
اسی دوران سکرین پر ایک بوڑھی عورت کاچہرہ نظر آیا جو بلند آواز سے بین کررہی تھی۔ شاید کسی مرنے والی کی ماں تھیں۔ مجھے محسوس ہوا کہ یہ آہ وبکاہ بھی میں پہلے متعدد بار سن چکا ہوں اور شاید یہ وہی ماں ہے جو ہر بار اپنی کسی اولاد کی لاش پرایسے ہی سینہ کوبی کر کے روتی ہے۔اس ماں کو میں نے تب بھی اسی طرح ماتم کرتے ہوئے دیکھا تھا جب مستونگ کے علاقے میں ان کے بچوں کو  بس سے اتار کر اور شناخت کر کر کے قتل کیا گیا تھا۔اس وقت بھی دیکھا تھا جب ان کے بچوں کے سروں میں اس وقت گولیاں اتاری گئی تھیں جب وہ محنت مزدوری میں مشغول تھے۔اس وقت بھی میں نے اس ماں کی دلخراش چیخیں سنی تھیں جب ان کے بچّوں  پر نماز کے دوران گولیاں برسائی گئی تھیں، تب بھی جب ہزارہ ٹاؤن جاتے ہوئے ان کی معصوم بچیوں کا قتل عام ہواتھا ۔اس وقت بھی میں نے اس ماں کو زاروقطار روتے ہوئے دیکھا تھا جب ایک بم دھماکے کے بعد اس کے بچوں کے اجسام ہوا میں تحلیل ہو گئے تھے۔   مجھے یقین ہے کہ یہ وہی ماں تھی  جس نے اپنی چیخوں سےاس وقت بھی آسمان سر پہ اُٹھا لیا تھا جب   علمدار روڈ کے اسنوکر کلب میں دھماکہ ہوا تھا۔انہیں میں نے تب بھی سینہ کوبی کرتے دیکھا تھا جب  ہزارہ ٹاون میں ایک ٹن بارود کے دھماکے سے اس کے بچّوں کے جسم کے چیتھڑے اُڑائے گئے تھے۔
پھر جیسے ایک دم سے مجھے یاد آیا کہ یہ تو وہی ماں ہے جو ایک عرصے سے پورے پاکستان میں روتی پھر رہی ہے۔یہ اس وقت بھی رو رو کر دہائی دے رہی تھی جب مارچ میں لاہور کے بادامی باغ کے سینکڑوں مکینوں کے گھروں کو آگ لگا کر انہیں بے آسرا کردیا گیا تھا۔ اس سانحے میں ان کے بچوں کی کتابیں، کھلونے اور کھانے بھی آگ میں بھسم ہو گئے تھے۔اس ماں کو تب بھی میں نے دیواروں سے سر ٹکراتے ہوئے دیکھا تھا جب کراچی کے عباس ٹاون میں دھماکہ کرکے درجنوں افراد کی زندگیوں کا چراغ گل کر دیا گیا تھا۔یہ ماں مجھے بارہا خیبر پختونخوا میں بھی سسکیاں بھرتی نظر آئی جہاں آئے دن اس کے بچوں کو بم دھماکوں میں مارا جا رہا تھا۔ انہیں میں نے گلگت میں بھی فریاد کرتے سنا تھا جب ان کے بچوں کو بسوں سے اُتار کر قتل کیا گیا تھا۔انہیں میں نے تب بھی پرنم آنکھوں سے آسمان کو تکتے اور اپنی چادر پھیلائے کسی سے فریاد کرتے دیکھا تھا جب داتا دربار بم دھماکے میں اس کے بچے قتل ہو ئے تھے۔انہیں میں نے تب بھی زاروقطار روتے دیکھا تھا جب ان کے بچے فرائض کی ادائیگی کے دوران دہشت گردی کا شکار ہوئے تھے اور وہ اس وقت بھی پھوٹ پھوٹ کر رورہی تھی جب ان کے بچے سکول، دفتر اور بازار جاتے وقت تاک میں بیٹھے کسی سفاک قاتل کی گولی کا نشانہ بنے تھے۔
میں نے غور سے دیکھنے کی کوشش کی تاکہ جان سکوں کہ اس ماں کے چہرے کے خدوخال کیسے ہیں؟ وہ دکھتی کیسی ہے؟ کس علاقے سے تعلق رکھتی ہے اورکونسی زبان بولتی ہے؟مجھے یہ بھی جاننے کی خواہش تھی  کہ ان کا عقیدہ کیا ہے؟ وہ سنی ہے یا شیعہ؟ نماز ہاتھ کھول کے پڑھتی ہے یا ہاتھ باندھ کے ؟ ہو سکتا ہے چرچ یا مندر جاتی ہوں۔ لیکن اپنی تمام تر کوششوں کے باوجود میں صرف اتنا ہی دیکھ پایا کہ وہ بس ایک ماں تھی اور ایک بار پھر اپنےقتل ہونے والے بچّوں کی لاشوں پر ماتم کررہی تھی۔

یہ مضمون 16جون .2013 کو ڈان نیوز پر شایع ہوا

شوٹ آؤٹ ایٹ بی ایم سی 

                                                                      

Share This:

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

جملہ حقوق بحق چنگیزی ڈاٹ نیٹ محفوظ ہیں