دہشت گردی ۔ اسباب ،اثرات اور سدّ باب

دہشت گردی ۔ اسباب ،اثرات اور سدّباب

10632892_10203048856199230_4849949756516839052_n
دہشت گردی کیا ہے ؟ آج تک اس کی کوئی متفقہ علمی تعریف سامنے نہیں آسکی ۔ ہر ایک کی نظر میں اس کی مختلف تشریح ہو سکتی ہے ۔ میری نظر میں جب کوئی فرد ، گروہ ، ادارہ یا حکومت دوسروں کے بنیادی حقوق کا احترام کئے بغیر ان پر ماؤرائے آئین اپنی مرضی ، سوچ ، نظریہ ، پالیسی یا عقیدہ دھونس دھمکی یا تشدد کے زریعے زبردستی مسلط کرنا چاہے تو اسے دہشت گردی کہتے ہیں ۔
دہشت گردی کی تاریخ اور پس منظر میں جائیں تو کتابوں پر کتابیں لکھنے کی ضرورت ہوگی ۔ مختصراَ اتنا ہی کہنا کافی ہوگا کہ دہشت گردی کی تاریخ اتنی ہی پرانی ہے جتنی خود انسانی تاریخ ۔

دہشت گردی کے پیچھے کوئی بھی سوچ یا نظریہ کا فرما ہوسکتا ہے ۔ عقاید کی ترویج کے نام پر ہونے والے جہاد ، فاشزم کی آڑ میں ہونے والی جنگیں ، نظریاتی تبدیلی کے نام پر برپا ہونے والے انقلابات اور کشور کشائی اور فتوحات کے نام پر دنیا بھر کے حملہ آوراور جنگجوؤں کی قتل و غارت ، لوٹ مار ، آبرو ریزی اور سروں کے مینار بنائے جانے کے عمل ، طاقت کے حصول یا معاشی اور سیاسی اثرو رسوخ حاصل کرنے کی خاطر لڑی جانے والی براہ راست یا بالواسطہ جنگوں کو میرے خیال میں دہشت گردی کے علاوہ کوئی اور نام نہیں دیا جاسکتا ۔
یہ الگ بات ہے کہ کسی مخصوص نظریے کا حامی اپنے مخالفین کی گردنیں کاٹنے اور انہیں سولیوں پر لٹکانے کے عمل کو حق بجانب ، جہاد یا انقلاب کا نام دیتے ہیں جبکہ انکا یہی جہاد اور احسن عمل ان کے مخالفین کی نظر میں غیر انسانی عمل اور دہشت گردی کے سوا کوئی اور مفہوم نہیں رکھتا ۔
دنیا کی جدید تاریخ میں دونوں عالمی جنگوں میں کروڑوں انسانی جانوں کے ضیاع اور اوران کے بعد کئی دہائیوں تک جاری رہنے والی سرد جنگ نے نہ صرف پوری دنیا کو دہشت گردی کی لپیٹ میں لئے رکھا بلکہ اس سرد جنگ کے بظاہر خاتمے کے باوجود آج بھی دنیا کے اکثر ممالک دونوں عالمی طاقتوں کی لگائی ہوئی آگ میں جھلس رہے ہیں ۔
ہمارا اپنا خطہ بھی گزشتہ تقریباَ چار دہائیوں سے ایسی ہی دہشت گردی کی لپیٹ میں ہے ۔
اس دہشت گردی کی مختلف وجوہات اور محرکات ہو سکتےہیں لیکن میرے خیال میں کئی دہائیوں سے جاری اس دہشت گردی کے پیچھے ان بین الاقوامی اور علاقائی طاقتوں کا زیادہ ہاتھ ہے جو خطے میں اپنی من پسند پالیسیاں نا فذ کرنا چاہتی ہیں ۔
میں اس بات پر یقین رکھتا ہوں کہ ستّر کی دہائی میں خطے میں برپا ہونے والے انقلابات یا بغاوتیں ( انہیں آپ چاہیں جو بھی نام دیں) دراصل سوشلزم کے علمبردار سوویت یونین اور سرمایہ دار ممالک کے سرخیل امریکہ کے درمیان جاری کشمکش کا نتیجہ تھے جنہوں نے پورے خطے کو جنگ و جدل اور ناآرامی کے ایک ایسے دلدل میں دھکیل دیا جس سے یہاں کی عوام لاکھ کوششوں کے باوجود ابھی تک نکلے پر قادر نہیں ہوسکی ۔ اس دوران پاکستان افغانستان اور ایران میں جس ترتیب اور مختصر وقفوں سے تبدیلیاں رونماء ہوئیں وہ بلا شک و شبہہ ان دو عالمی طاقتوں کی باہمی چپقلش کا شاخسانہ تھیں ۔ جن کے نتیجے میں لاکھوں افراد کی زندگیاں قربان ہوئیں اور کروڑوں لوگ اپنی خاک اور گھربار چھوڑ کر غیر ممالک میں پناہ لینے پر مجبور ہوئے ۔ اسی قتل و غارت اور مہاجرت کا نتیجہ تھا کہ ان جنگ زدہ انسانوں کی ایک پوری نسل تعلیم اور بہتر روزگار سے محروم رہی جسے بعد میں مختلف طاقتوں نے بطور Tool اپنے مفادات کی بھٹی میں جھونک دیا ۔
اب یہ بات ڈھکی چھپی نہیں رہی کہ افغانستان میں سوویت حمایت یافتہ پی ڈی پی اے کی حکومت کو ناکام بنانے اور سوویت یونین کو زک پہنچانے کے لئے امریکہ نے دنیا بھر سے دہشت گردوں کو جہاد کے نام پرافغانستان اور پاکستان کی سرزمین پر آباد کیا جو ایران اورعرب ممالک کے پیسے اور امریکی و پاکستانی اسلحے کے زور پر لوگوں کی لاشیں گراتے رہے ۔ اس امریکی جہاد کے دوران جہاں ایک طے شدہ منصوبے کے تحت خطے میں مذہبی شدت پسندی کو فروغ دیا گیا وہاں ایران عرب داخلی چپقلش اور امت مسلمہ کی امامت حاصل کرنے کی دوڑ نے یہاں فرقہ واریت کو بھی اپنے عروج پر پہنچادیا ۔
اسی دوران خمینی حکومت نے ” اسلام مرز ندارد ” کے شعار کے ساتھ اپنا انقلاب دیگر ملکوں میں برآمد کرنے کی جو پالیسی اختیار کی اس نے پاکستان اور افغانستان سمیت وسط ایشیاء اور مشرق وسطیٰ کے کئی ممالک کو فرقہ واریت کی آگ میں جھونک دیا ۔
یہ ایک اتفاق ہرگز نہیں تھا کہ ایرانی انقلاب کی کامیابی کے محض کچھ مہینوں بعد پاکستان میں تحریک نفاذ فقہہ جعفریہ کے نام سے ایک ایسی شیعہ تنظیم وجود میں آئی جس نے پاکستان میں جعفری فقہہ کے نفاذ کا مطالبہ کرنے اور یہاں بھی ایران جیسا انقلاب برپا کرنے کا نعرہ بلند کیا ۔ یہ وہ وقت تھا جب پاکستان اور افغانستان میں عرب جہادیوں کی آمد شروع ہو گئی تھی جنکا مقصد بظاہر سوویت یونین کے خلاف جہاد میں حصہ لینا تھا ۔ اس دوران عرب ممالک کی سرپرستی میں نہ صرف پورے پاکستان میں دینی مدرسوں کے نام پر جہادیوں کی تربیت گاہوں کے قیام کا سلسلہ شروع ہوا بلکہ علاقے میں ایرانی اثرات کے خاتمے کے لئے مختلف فرقہ پرست گروہوں کو نوازنے کی بھی ابتدا ہوئی ۔اور یہی وہ دور تھا جب پاکستان کی سرزمین پر سعودی عرب اور ایران کی کشمکش اور پراکسی جنگ کا آغاز ہوا ۔
چھ جولائی 1985 کا واقعہ پاکستان کوعملی طور فرقہ واریت کی آگ میں جھونکنے کا نقطہ آغاز تھا جس کے صرف دو مہینے بعد ہی پنجاب کے شہر جھنگ میں سپاہ صحابہ نامی تنظیم کی داغ بیل ڈالی گئی ۔ بعد میں ان دونوں تنظیموں اور ان کے بطن سے پھوٹنے والے دیگر گروہوں نے مل کر پنجاب میں قتل و غارت کا جو سلسلہ شروع کیا اس نے نواز برادران کو دونوں اطراف کی تنظیموں کے ساتھ ایک ایسے معاہدے پر مجبور کردیا جس کا مقصد پنجاب کو اس فرقہ وارانہ دہشت گردی سے نجات دلانا تھا ۔
اس معاہدے کے بعد نہ صرف وہاں کی سنّی فرقہ پرست تنظیمیں نواز شریف کی اتحادی بن گئیں بلکہ انہوں نے پنجاب سے کوچ کرکے اپنا مرکز بلوچستان میں منتقل کردیا ۔
ان فرقہ پرست گروہوں نے اپنی کاروائیوں کے لئے پہلے پہل آر سی ڈی شاہراہ پر واقع بلوچ علاقے مستونگ کا انتخاب کیا جو پاکستانی اور ایرانی بلوچستان کو ملانے والی معروف بین الاقوامی شاہراہ پر واقع ہے ۔
یہاں اپنے پاؤں جمانے کے بعد انہوں نے سب سے پہلے انہی خاندانوں کا صفایا کرنا شروع کیا جو اپنا مسلک ترک کر کے شیعہ ہوچکے تھے ۔ یہ ان لوگوں کے لئے ایک واضح پیغام تھا جو ان کے خیال میں شیعہ مسلک اختیار کرکے علاقے میں ایرانی اثرو نفوذ کو بڑھاوا دینے کا سبب بن رہے تھے ۔
تب سے لیکر اب تک ہزارہ قوم پرفرقہ واریت کے نام پرجتنے دہشت گرد حملے ہوئے اور جس طرح ہر طبقہ فکر سے متعلق افراد کی ٹارگٹ کلنگ کی گئی وہ کسی سے پوشیدہ نہیں ۔ یاد رہے کہ میں ان دہشت گرد تنظیموں کی بات کررہا ہوں جنہیں میڈیا رپورٹس کے مطابق سعودی عرب اور دیگر خلیجی ملکوں سے سالانہ کروڑوں ڈالر ملتے ہیں ۔ دوسری طرف میڈیا پر ایسی بھی رپورٹس شائع ہوتی رہی ہیں جن کے مطابق ایران بھی پاکستان کے اندر بعض ایسے شیعہ دہشت گرد گرہوں کی سرپرستی کر رہا ہے جوبڑی تعداد میں مخالفین کے قتل میں ملوث ہیں ۔ جہاں تک حکومتی اور ریاستی اداروں کا تعلق ہے تو انہوں نے جس طرح بے گناہ لوگوں کے قتل عام سے متعلق اپنی آنکھیں بند رکھی ہیں اسے دیکھ کر یہ اندازہ لگانا ہر گز مشکل نہیں کہ انہوں نے پنجاب کو بچانے اور بوقت ضرورت ان گروہوں سے ماوارائے قانون کام لینے کی خاطر ان کے سروں پر دست شفقت رکھ کران کا رخ بلوچستان بالخصوص ہزارہ قوم کی طرف موڑ دیا ہے۔
یہاں اس بات کا تذکرہ بھی لازم ہے کہ اگست 2006 میں نواب اکبر بگٹی کے قتل کے بعد ہزارہ قوم کے خلاف دہشت گردی میں جس تیزی سے اضافہ دیکھنے میں آیا اسے اتفاق ہر گز نہیں کہا جاسکتا ۔
یاد رہے کہ بلوچ علیحدگی پسندی کی حالیہ تحریک کا آغاز 2003 میں ہوا تھا جس میں نواب بگٹی کے قتل کے بعد نہ صرف تیزی آئی بلکہ صوبے میں آباد سیٹلرز کے قتل میں بھی بے تحاشا اضافہ ہوا ۔ اسی دوران بلوچستان کے آئی جی پولیس کا وہ بیان شاید اکثر لوگوں کی نظروں سے گزرا ہوگا جس میں انہوں نے ٹارگٹ کلنک کا علاج ٹارگٹ کلنگ کو قرار دیا تھا ۔ جس کے بعد نہ صرف بلوچوں کے اغوا اور ٹارکلنگ میں تیزی آئی بلکہ ہزارہ قوم کے خلاف دہشت گردی اور ٹارگٹ کلنگ کے واقعات میں بھی بے پناہ اضافہ ہوا ۔
اس بات سے یہ تاثر ابھرنا لازمی تھا کہ ہزارہ قوم کے بے رحمانہ قتل عام کا ایک مقصد بلوچوں کی تحریک آزادی سے دنیا کی توجہ ہٹانا ہے جس میں مقتدر قوتیں کافی حد تک کامیاب رہیں ۔
یہاں ریکارڈ کی درستگی کے لئے یہ بتانا لازمی ہے کہ یہ محض ایک الزام نہیں بلکہ دسمبر 2013 میں وفاقی وزیر داخلہ چودھری نثار کا ایک بیان سامنے آیا تھا جس کے مطابق حکومت نے ان "محب الوطن” اور "عوام دوست” گروہوں کو غیر مسلح کرنے کا اعلان کیا تھا جنہیں انکے بقول اسلم رئیسانی کی حکومت کے دوران تشکیل دیا گیا تھا اور جو وسیع پیمانے پر صوبے میں دہشت گردی اور قتل و غارت میں ملوث تھے ۔ اخباری اطلاعات کے مطابق یہ گروہ نہ صرف بلوچوں کے اغوا اور قتل عام میں ملوث تھے بلکہ ہزارہ قوم کے خلاف ہونے دہشت گردی کے واقعات میں بھی انہی گروہوں کا ہاتھ تھا ۔
لیکن یہاں یہ سوال پیدا ہوتا ہے کہ بلوچ علیحدگی پسندی کی یہ تحریک صرف پاکستانی بلوچستان تک محدود نہیں بلکہ اس کی جڑیں ایرانی بلوچستان میں بھی پیوست ہیں ۔ تو کیا یہ تصور غلط ہوگا کہ مشترکہ مفادات کے حصول کی خاطر دونوں ممالک مل کراس فرقہ وارانہ پالیسی کو آگے بڑھا رہے ہیں تاکہ بلوچوں کی آزادی کی تحریک کو Over Shadow کیا جا سکے ؟ ویسے بھی کسی بڑے مقصد کے حصول کی خاطر کچھ نہتے ، بے زبان ، معصوم اور بے گناہ لوگوں کا خون بہانا ان دونوں کے لئے گھاٹے کا سودا ہر گز نہیں ؟
کچھ لوگ اس دہشت گردی کے پیچھے ان بین الاقوامی قوتوں کا ہاتھ تلاش کرتے ہیں جن کی نظریں بلوچستان کے جغرافیائی محل وقوع اور یہاں کی معدنیات پر ٹکی ہیں ۔
میرا سوال یہ ہے کہ کیا معصوم ہزارہ بچّوں ، عورتوں ، بو ڑھوں اور جوانوں کا قتل عام صرف اس لئے کیا جا رہا ہے تاکہ بلوچستان کے خزانوں کی کنجی حاصل کی جا سکیں ؟
میری ناقص معلومات کے مطابق بلوچستان سے زیادہ معدنیات اور قدرتی وسائل تو مڈل ایسٹ اور سنٹرل ایشیائی ممالک میں ہیں ۔ لہٰذا ان کا گھیراؤ کرنے کے بجائے ان پر براہ راست کمندیں کیوں نہیں ڈالی جاتیں ؟ یہ میری سمجھ سے بالا تر ہے ۔ اورکیا وجہ ہے کہ ان پر ڈورے ڈالنے کی کوئی کوشش نہیں کرتا ۔ بلکہ ان سے پینگیں بڑھائی جاتی ہیں ؟
لہٰذا میری نظر میں خطے با لخصوص پاکستان میں جاری دہشت گردی کی ایک بڑی وجہ علاقائی طاقتوں کی کشمکش بالخصوص ایران عرب پراکسی وار کو قرار دیا جاسکتا ہے جو اپنی تھیو کریٹک اقتدار کو سنبھالا دینے اور اپنے اثرو رسوخ میں اضافے کے لئے خطے کو فرقہ وارانہ جنگ میں مبتلا رکھے ہوئے ہیں ۔ دوسری طرف پاکستانی حکمرانوں اور ریاستی اداروں کی عوام کے مسائل سے چشم پوشی ، عوام کی جان و مال کے تحفظ میں مجرمانہ غفلت ۔، ریاستی اداروں کی آپس کی لڑائی بلکہ خارجی طاقتوں کے آلہ کار کی حیثیت سے ان کے ماورائے آئین اقدامات بھی گزشتہ کئی دہائیوں سے جاری اس دہشت گردی کی وجوہات ہو سکتی ہیں ۔
اس کے علاوہ اس دہشت گردی اور قتل و غارت میں کچھ مقامی گروہ اورلینڈ مافیا کے کچھ حلقے بھی ملوث ہو سکتے ہیں جو بقول ہزارہ گی ” آؤ رہ غٹول دیدہ مائی خود خو بّر مونہ ” یعنی جو موقع محل دیکھ کے اپنا کام نکالتے ہیں ۔
اب صورت حال یہ ہے کہ لوگ ایک دوسرے سے بیگانہ ہوکر اپنی حدود میں مقید ہو کر رہ گئے ہیں ۔
وہ اونچی دیواروں اور ناکوں کے درمیان زندگی گزارنے پر مجبور ہیں ۔
کاروبار ، تعلیم اور ملازمت کے دروازے ان پر مسدود ہو چکے ہیں اور وہ بہتر زندگی کی تلاش میں اپنا گھر بار ترک کرنے اور مہاجرت کی زندگی گزارنے پر مجبور ہو چکے ہیں ۔
اب رہا یہ سوال کہ دہشت گردی سے چھٹکارا کیسے پایا جا سکتا ہے ؟ تو میرے خیال میں یہ سوال جتنا سیدھا ہے اسکا جواب اتنا ہی ٹیڑھا ۔
اگر ہم اس بات پر یقین رکھتے ہیں کہ فرقہ واریت کی آڑ میں ہم پر مسلط کی گئی اس دہشت گردی کے پیچھے کچھ بین الاقوامی یا طاقتور علاقائی قوتیں ملوث ہیں جنہیں کچھ داخلی قوتوں اور اداروں کی پشت پناہی حاصل ہے ۔ تو ہمیں اس سوال کا جواب بھی ڈھونڈنا پڑے گا کہ ہمارے اندر ان قوتوں سے لڑنے کی کتنی سکت ہے ؟
کیا اگر ہم سارے اختلافات بھلا کر ایک ہو جائیں (جو میری نظر میں ناممکن اور غیر فطری سوچ ہے) تو کیا ہم اس دہشت گردی سے نجات حاصل کر سکتے ہیں ؟
کیا ہم سعودی عرب اور ایران سمیت تمام علاقائی یا بین الاقوامی کھلاڑیوں کو اس بات پر آمادہ کر سکتے ہیں کہ خدا کے لئے وہ ہماری جان بخش دیں ؟
کیا ہم بلوچوں سے اس بات کا تقاضا کر سکتے ہیں کہ وہ اپنی جدو جہد ترک کرکے ، صبر شکر کرکے بیٹھ جائیں؟
کیا ہم شیعوں کو یہ نصیحت کر سکتے ہیں کہ وہ اپنا عقیدہ چھوڑ کر سنّی بن جائیں تاکہ ان کی گلو خلاصی ہو ؟
یا پھر کیا ہم اجتماعی مہاجرت کر سکتے ہیں ؟
اگر نہیں تو ہمیں ہر حال میں باعزت طریقے سے زندہ رہنے کا گُر اپنانا ہوگا ۔
ہمیں اپنی صفیں ٹھیک کرنی ہونگیں اور (تمام تر اختلافات کے باوجود جو ایک فطری عمل ہے )ایک دوسرے کی ٹانگیں کھینچنے کے بجائے ایک دوسرے کو حوصلہ دینا ہوگا ۔
ہمیں دوسروں کے نظریات اور عقاید کا اتنا ہی احترام کرنا ہوگا جتنا ہم اپنے نظریات کا کرتے ہیں ۔
معاشرے میں رواداری اور برداشت کو فروغ دینا ہوگا اور اس کی ابتدا اپنے آپ سے کرنی ہوگی ۔
دہشت گردی اور قتل عام سے ڈر کر خاموشی اختیار کرنے کے بجائے اس ظلم کے خلاف ہرفورم پرآواز بلند کرکے ہمیں اپنے زندہ ہونے کا ثبوت دینا ہوگا ۔
ہمیں اپنے ہمسایوں سے تعلقات بہتر بنانے ہو نگے اورایک دوسرے کے دکھ درد میں عملاَ شریک ہونا ہوگا ۔
ہمیں ہر حال میں مذہبی شدت پسندی کی حوصلہ شکنی کرنی ہوگی اور ایسے عناصر کا راستہ روکنا ہوگا جو معاشرے کو منافرت اور عدم برداشت کی طرف لے جا رہے ہیں ۔
مجھے امیدہے کہ اگر ہم یہ کرنے میں کامیاب ہو جائیں تو ہم بے شک دہشت گردی کو جڑ سے ختم نہ کر سکیں لیکن ایک ایسی سوچ کی بنیاد ضرور ڈال سکتے ہیں جو ہماری نئی نسل کو دہشت گردی سے پاک ماحول فراہم کرنے میں معاون ثابت ہوں ۔
یہ مقالہ 21 اکتوبر 2014 کو منعدہ پروگریسو اکیڈمک فورم کے سیمینار میں پڑھا گیا ۔

Share This:

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

جملہ حقوق بحق چنگیزی ڈاٹ نیٹ محفوظ ہیں